انتخابات کے بعد

ظفر عاقل

گزشتہ  ایام  میں  جس  عظیم  سانحہ  سے  ملک  وملت  کودوچار  ہونا  پڑا  وہ  فسطائی  نظریات  کے  حامل  گروہ  برسراقتدار  آجانا  ہے۔یہ  عناصر  اس  ملک  میں  محض  حکمرانی  نہیں  چاہتے  بلکہ  بہ  جبر  سب  ایک  مخصوص  رنگ  میں  رنگ  کر  منفرد  خصوصیات  و  پہچان  سے  محروم  کرنا  چاہتے  ہیں۔  یہ  اگر  صرف  سیاسی  قوت  ہوتی  تب  بالادستی  ایک  وقتی  بات  ہوتی؛  جس  سے  صرف  نظر  کیا  جاسکتا  تھا۔  لیکن  دیومالائی  تصورات  فسطائیت  کے  رنگ  میں  غالب  آجائیں  تب  تشویش  وفکر  مندی  فطری  ہے۔  سدباب  کی  کوشش  ضروری  ہے۔  اس  پیچیدہ  صورتحال  میں  غفلت،  بزدلی  اور  مایوسی  نہ  صرف  غلط  ہوگی  بلکہ  مومنانہ  شان  کے  خلاف  ہوگی۔  تاریخ  شاہد  ہے  کہ  اس  سے  بدتر  اور  حوصلہ  شکن  حالات    سے  ملت  اسلامیہ  گزری  ہے  اور  وہ  کامیاب  وکامران  رہی  ہے۔  تاریخی  حقیقت  یہ  بھی  ہے  کہ  اس  طرح  کے  حالات  و  آزمائش  کی  بھٹی  سے  مخالف  ’’موافق‘‘  بھی  بنتے  رہے  ہیں۔  (پاسباں  مل  گئے  کعبہ  کو  صنم  خانے  سے)  ؛  اور  آگے  بڑھ  کر  پرچم  اسلام  کی  سربلندی  کے  لئے  انھوں  نے  اپنی  توانائیاں  بھی  نچھاور  کی  ہیں۔

سیاسی  ومعاشرتی  حالات  کی  گردشیں  مشیت  حق  کے  تابع  ہیں۔  اہل  حق  کو  اسی  مشیت  الٰہی  کے  تحت  آزمائش  سے  گزارا  ہے۔  قرآن  کریم،  سیرت  انبیاء  اور  سلف  صالحین  کی  تعلیمات  وتاریخ  اس  کا  بین  ثبوت  ہیں۔  اس  مشیت  الٰہی  سے  کسی  بھی  دور  کی  تحریک  اسلامی  کو  مفر  نہیں  رہا  ہے۔  ضروری  ہے  کہ  اِس  بنیادی  حقیقت  کو  پیش  نظر  رکھ  کر  دینی  تحریکیں  اور  اُن  کے  فرزندان  اپنی  سرگرمیوں  کی  پلاننگ  کریں  اور  اصل  فریضے  سے  غافل  نہ  ہوں۔  ورنہ  یہ  اُخروی  مواخذہ  کا  موجب  ہوگا۔  اس  دارالعمل  فانی  دنیا  میں  بھی  اس  طرز  کو  خدا  تعالیٰ  کی  رضا  حاصل  نہیں  ہوگی۔  آزمائشوں  کو  دعوت  دینا  بلاشبہ  صحیح  نہیں  ہے،  لیکن  دوسری  جانب  قرآن  و  سیرت  شاہد  ہے  کہ  بندۂ  مومن  آزمائش  میں  صابر  وشاکر  رہتا  ہے؛  نیز  مومنانہ  بصیرت  اور  مجاہدانہ  پامردی  و  استقامت  سے  درپیش  حالات  کا  مقابلہ  بھی  کرتا  ہے۔  اللہ  تعالیٰ  کی  مرضیات  کے  مطابق  زندگی  کے  تمام  معاملات  کو  سنوارنے  کا  عزم  اسے  بے  راہ  روی  سے  بچائے  رکھتا  ہے۔  اس  کی  نظر  میں  دنیاوی  زندگی  عارضی  زندگی  ہے۔  لازوال  اُخروی  زندگی  کی  ہمیشگی  کا  اُسے  یقین  کامل  ہوتا  ہے  ،دگرگوں  حالات  میں  اس  یقین  میں  مزید  پختگی  آجاتی  ہے۔  آزمائشوں  کو  وہ  درجات  کی  بلندی  اور  اپنے  خالق  کی  قربت  کا  ذریعہ  گردانتا  ہے۔

برصغیر  میں  ہزار  سال  تک  اقتدار  سنبھالنے  کا  مسلم  حکمرانوں  کو  موقع  دیاگیا،  تحریک  اسلامی  کو  بھی  ابلاغ  و  اقامت  دین  کی  سعی  کرتے  ہوئے  پون  صدی  کا  عرصہ  بیت  چکا  ہے۔  اس  سے  زیادہ  کام  کا  موقع  دینی  جامعات  اور  ائمہ  ملت  کو  ملا  ہے۔  قرآن  وسیرت  کے  پیغام  کو  عام  کرنے  اور  دعوت  دین  کے  فروغ  کااہتمام  و  انصرام  تحریک  اسلامی  نے  کیا  تھا۔  یہ  پیغام  آج  عصر  حاضر  میں  دینی  جدوجہد  عام  عنوان  بن  چکا  ہے۔  یہ  خوش  آئند  تبدیلی  بہرحال  تحریک  اسلامی  کے  لئے  باعث  تشکر  ہے۔  لیکن  اب  سوال  ہم  سے  ہے  کہ  دعوت  دین  ،  اشاعت  دین  اور  ابلاغ  و  اقامت  دین  کے  لئے  امت  مسلمہ  کو  کس  حد  تک  تیار  کرسکے  ہیں۔  یہ  صورتحال  ہر  سطح  کے  خود  احتسابی  کا  تقاضا  کرتی  ہے۔  ادارہ  جاتی  سرگرمیاں،  مروجہ  پروگرامس  کی  درجہ  بندی  و  تنظیم  ہماری  ضرورت  ہے؛  یہ  سب  ہمارے  کام  کے  ذرائع  بھی  ہیں،  لیکن  بہرحال  محض  سرگرمیاں  اصل  مطلوب  نہیں۔  ملت  اسلامیہ  میں  شعور  کی  بیداری  اصل  مقصود  ہے۔  تحریک  اسلامی  ہو  یا  دیگر  دینی  جماعتیں  اور  ادارے  ان  کا    نفوذ  اثر  پذیری  کے  اعتبار  سے  ملت  کے  ایک  بہت  ہی  قلیل  حصے  میں  ہے۔  حقیقت  یہ  ہے  کہ  ملت  اسلامیہ  آج  بھی  اپنے  فرض  منصبی  سے  غافل  ہے۔  اس  کے  ائمہ  و  علماء  اور  زعماء  و  قائدین  اور  تنظیمی  ادارے  اقامت  دین  کو  اپنا  فرض  منصبی  گردانے  سے  اعراض  کی  روش  کے  خوگر  ہیں۔  چنانچہ  دین  حق  سے  ناواقف  ابنائے  وطن  کی  ایک  عظیم  اکثریت  ہے۔  یہ  صورتحال  ساری  دینی  جماعتوں  کے  لئے  ہر  لحاظ  سے  ہے  اور  سوالیہ  نشان  بھی  ضروری  ہے  کہ  ملت  اسلامیہ  برادران  وطن  کے  سامنے  دعوت  حق  کی  کما  حقہ  ترسیل  کا  فریضہ  انجام  دے  کر  شہادت  حق  کے  تقاضے  پورے  کرے۔

رمضان  المبارک  تربیت  کا  موقع  فراہم  کرتا  ہے۔  یہ  خالق  کون  ومکاں  کا  بہترین  عطیہ  ہے  جو  انسان  کو  شکرگزار  و  عبادت  گزار،  متقی  وپرہیزگار  نیز  بندگان  خدا  پر  شفیق  بناتا  ہے۔  سال  بھر  کی  لغزشوں  ،  کوتاہیوں  ونافرمانیوں  کے  میل  کچیل  کو  دھوکر  پاک  صاف  کرنے  والا  ماہ  مبارک  ہے۔  معاشرے  کے  ہر  گوشے  میں  تقویٰ  و  پرہیزگاری  و  حسنات  کا  چرچا  ہوتا  ہے۔  ذوق  وشوق  عبادت  سے  فضا  معمور  ہوتی  ہے۔  ذکر  وفکر،  رکوع  و  سجود  اور  تلاو  ت  وترتیل  قرآن  کے  لئے  ماحول    بن  جانے  کی  اصل  وجہ  ماہ  صیام  کے  روزے  ہیں۔  اس  ماہ  خیر  وقدر  کی  حامل  عظیم  رات  شب  قدر  بھی  ہے  کہ  جس  میں  قرآن  کریم  کو  نازل  کیاگیا  ۔  اسی  مبارک  ماہ  میں  جنگ  بدر  کی  آزمائشوں  سے  امت  مسلمہ  کو  گزار  کر  کندن  بنایا  گیا  اور  فتح  مکہ  کی  نوید  بھی  سنائی  گئی۔  عصر  حاضر  میں  ہمارا  ملک  اور  ملت  اسلامیہ  جن  مسائل  سے  دوچار  ہے  اس  پس  منظر  میں  رمضان  المبارک  کی  معنویت  اور  استفادے  کی  ضرورت  بڑھ  جاتی  ہے۔

فراست  و  حکمت  مومن  کا  گمشدہ  خزانہ  ہے،  صبر  کا  دائرہ  وسیع  ہے  اور  دین  میں  بڑی  وسعت    و  پائداری  ہے۔  ملک  کے  موجودہ  حالات  میں  لازم  ہے  کہ  ہم  ملک  وملت  کو  رہنمائی  فراہم  کریں۔  اِن  امور  کی  یاد  دہانی  ضروری  ہے۔  خدا  تعالیٰ  سے  ربط  وتعلق  میںاضافہ  ہو۔  اوامر  ونواہی  کا  از  حد  خیال  رکھا  جائے۔  نظم  جماعت  کی  پاسداری  ہو  اورتحریک  اسلامی  کے  پیغام  کی  ترسیل  عام  ہو۔  قرآن  کریم  اور  سیرت  مبارکہ  کے  مطالعہ  اور  اُن  سے  استفادے  میںدوام  و  تسلسل  ہو  اور  حالات  کے  درست  ہونے  کے  لئے  اللہ  تعالیٰ  کے  حضور  دعائیں  کی  جائیں  اورتوبہ  وانابت  کے  ساتھ  اس  کی  طرف  رجوع  کیا  جائے۔  اجتماعی  حیثیت  میں  ہرفرد  دین  کی  دعوت  وترسیل  وتبلیغ  کو  اپنے  روزمرہ  کے  کاموں  میں  شامل  رکھے۔  اپنوں  اور  غیروں  کی  غلط  فہمیوں  کا  ازالہ  کیاجاتا  رہے۔  برادران  وطن  سے  دعوتی  روابط  و  تعلقات  کو  مستحکم  بنایا  جائے۔  ادارہ  جاتی  وانفرادی  خدمت  خلق  کے  دائرے  کو  بلا  تفریق  وسیع  تر  کیا  جائے۔  ملک  ووطن  اور  عوام  کی  حقیقی  خیرخواہی  کے  تقاضے  بتائے  جائیں۔  تیسری  جانب  حکومت  اہل  اقتدار  اور  حکمرانوں  کی  کارکردگی  پر  نظر  رکھی  جائے،  سرمایہ  دارانہ  نظام  کے  اثرات  ،  مہنگائی  اور  قیمتوں  میں  اضافے  جیسے  مسائل  پر  پکاربلند  بھی  کی  جاتی  رہے۔  بے  جا  جذباتی  ردعمل  سے  لازم  ہے  کہ  اجتناب  کیاجائے۔  پرسکون  حالات  کی  برقراری  کی  کوشش  کی  جائے۔  منصف  مزاج  اور  اصولی  موقف  رکھنے  والے  افراد  و  اداروں  میں  باہمی  ربط  وتعلق  کو  مضبوط  کیا  جائے  اور  فسطائی  منصوبوں  کے  تدارک  کا  پروگرام  بنایا  جائے۔  ترسیل  وتفہیم  کی  آزادی  کو  فسطائیت  سے  جو  خطرہ  لاحق  ہے  اُسے  ملک  اور  اہل  ملک  پر  نہ  صرف  واضح  کیاجائے  بلکہ  اُن  کو  ہمنوا  بناکر  عملی  جدوجہد  کے  لئے  آمادہ  کیا  جائے۔

ملک  اور  موجودہ  حالات  کے  پس  منظر  میں  مذکورہ  بالا  گزارشات  کی  معنویت  واضح  ہے۔  ہمارے  وطن  اور  باشندگان  ملک  کی  سرشت  میں  رواداری  پائی  جاتی  ہے۔  سوچ  وفکرکی  آزادی،  خیر  پسندی،  حق  کی  تلاش  و  جستجو،  نجات  کی  فکر  وتگ  ودو  یہاں  کی  خصوصیات  ہیں۔  یہ  ملک  عرصۂ  دراز  سے  مذہب  کا  گہوارہ  رہا  ہے۔  البتہ  اس  ارضی  گوشہ  میں  روحانیت  صحیح  راہ  نہ  پاکر  رہبانیت  کے  حلقے  کی  اسیر  ہوتی  رہی  ہے  اور  حق  کے  متلاشیوں  کو  کوہ  و  دمن  کا  باسی  بناتی  رہی  ہے۔  دوسری  جانب  محبت،  بھلائی  وترقی  کا  جذبہ  دیش  واسیوں  کو  بے  چین  کئے  رہتا  ہے  اور  ان  جذبات  کے  زیر  اثر  بعض  ابنائے  وطن  میں  مسلمانوں  اور  دین  اسلام  کے  تعلق  سے  غلط  فہمیاں  بھی  پائی  جاتی  ہیں  جو  مختلف  واقعات  کا  اور  نسل  کشی  وفسادات  کا  سبب  بنتی  ہیں۔  عوام  الناس  جانتے  ہیں  کہ  انسانی  پیدائش  کو  بنیاد  بنانے  والا  طبقاتی  نظام  یہاں  موجود  ہے۔  جو  عصر  حاضر  میں  بھی  ذات  برادری  کی  تقسیم  کا  قائل  اور  اُس  پر  عامل  ہے؛  اس  کی  جڑیں  روایات  میں  اتری  ہوئی  ہیں۔

مذکورہ  امور  وخصوصیات  کی  رعایت  امت  مسلمہ  کے  لئے  ضروری  ہے۔  اسلام  تعمیری  فکر  کا  حال  دین  ہے۔  وہ  مساوات  انسانی  کا  داعی  ہے  اور  بنی  نوع  انسانی  و  انسانیت  کو  تکریم  عطا  کرنے  والا  دین  فطرت  و  آسمانی  مذہب  ہے۔  چنانچہ  دین  اسلام  کی  افہام  وتفہیم  وترسیل  مثبت  وتعمیری  نتائج  کا  سبب  بنے  گی۔  ابنائے  وطن  میں  کسی  وجہ  سے  بھی  غلط  فہمیاں  درآئی  ہوں  یا  تعصب  وتنگ  نظری  موجود  ہو  تو  اس  کا  ازالہ  بھی  وقت  کی  ضرورت  ہے۔  اس  امر  کا  اظہار  واعلان  بھی  اہمیت  رکھتا  ہے  کہ  دین  اسلام  وحدت  بنی  آدم  کا  علمبردار  ہے  اور  انسانوں  کے  ایشور  اور  خالق  ومالک  کا  عطاکردہ  طریقۂ  زندگی  ہے۔  اس  کی  رہنمائی  ہر  کسی  کے  لئے  ہے،  چنانچہ  اس  عالمگیر  دین  ومذہب  کے  حاملین  پر  لازم  ہے  کہ  اپنی  ذمے  داری  کی  اہمیت  کو  محسوس  کریں  اور  عمل  کے  لئے  آمادہ  ہوجائیں۔

یہ  سنگین  مغالطہ  ہوگا  کہ  جن  افراد  وعناصر  کےہاتھوں  میں  اقتدار  آچکا  ہے  وہ  اپنی  سابقہ  وآزمودہ  رویہ  ور  وش  کو  یک  لخت  چھوڑ  دیں  گے  اور  سارے  ملک  کی  ترقی  کے  انتخابی  وعدوں  کے  پیش  نظر  کام  کریں  گے۔  یا  بہترین  گورننس  کے  پیش  نظر  راج  دھرم  کا  پالن  کرتے  ہوئے  محرومین  کے  لئے  بھی  عافیت  و  عزت،  بھلائی  وبرابری  اور  چین  وسکون  کے  سامان  کی  فراہمی  کا  سبب  بن  جائیں  گے۔  یہ  حقیقت  اظہر  من  الشمس  ہے  کہ  حکمراں  سیاسی  قوت  پر  ایک  مخصوص  نظریہ،  تحریک  و  تنظیم  کی  نگرانی  ہے۔  اس  کی  حکمت  عملی  متعینہ  مقاصد  کے  حصول  اور  حاصل  شدہ  اقتدار  کی  پائداری  کے  لئے  بہتر  وقت،  مواقع  اور  مناسب  حالات  کی  متلاشی  ہوسکتی  ہے۔  قابل  غور  امر  یہ  ہے  کہ  کیا  وہ  ماہیت  قلبی  سے  اپنے  کو  گزار  کر  ایک  منصف  گروہ  کا  روپ  دھارن  کرسکتے  ہیں؟  بہرحال  کیا  یہ  امکان  نہیں  کہ  یہ  ایک  دور  کی  کوڑی،  سہانا  خواب  اور  مغالطہ  ہی  ہو۔  چنانچہ  روش  کا  عکاس  و  مظہر  بن  جانے  سے  بہتر  ہے  کہ  ذمے  داری  کی  فکر  کریں  اور  شہادتِ  حق  کے  لئے  سرگرم  ہوجائیں۔

اکتوبر 2014

مزید

حالیہ شمارے

Zindagi e Nau