رسائل و مسائل

محمد رضی الاسلام ندوی

حج  کے  بعض  مسائل

سوال:(۱)حاجیوں  کے  لئے    ۸؍  ذی  الحجہ  کو  نماز  فجر  کے  بعد  مکہ  میں  اپنی  رہائش  گاہ  سے  احرام  باندھ  کر  منٰی  روانہ  ہونے  کا  حکم  ہے۔  وہاں  وہ  ظہر،  عصر،  مغرب،  عشاء۱ور  ۹؍  ذی  الحجہ  کو  فجر  کی  نمازیں  ادا  کرتے  ہیں۔  پھر  طلوع  آفتاب  کے  بعد  ان  کے  لیے  منٰی  سے  عرفات  روانگی  کا  حکم  ہے۔  مگر  حج  کمیٹی  والے  ہوں  یا  پرائیویٹ  ٹورس  والے،  دونوں  ٹرانسپورٹیشن  میں  سہولت  کی  خاطر،  حاجیوں  کو  بسوں  کے  ذریعے  سات  اور  آٹھ  کی  درمیانی  شب  ہی  میں  منٰی  پہنچا  دیتے  ہیں۔  اس  طرح  انھیں  آٹھ  کی  فجر  منٰی  میں  ادا  کرنی  پڑتی  ہے۔  اسی  طرح  انہیں  منٰی  سے  عرفات  ۸؍  اور  ۹؍  کی  درمیانی  شب  میں  پہنچا  دیاجاتا  ہے  ۔  اس  طرح  حاجی  ۹؍  کی  فجر  عرفات  میں  ادا  کرتے  ہیں۔

ایسا  کرنے  میں  شرعی  قباحت  تو  نہیں  ہے؟

(۲)عرفات  ایک  طویل  وعریض  میدان  ہے۔  اس  کے  ایک  سرے  پر  مسجد  نمرہ  واقع  ہے۔  اگر  کوئی  شخص  مسجد  نمرہ  نہ  جاسکے،  اس  خوف  سے  کہ  راستہ  گم  ہوجائے  اور  ساتھیوں  خصوصاً  خواتین  سے  بچھڑنے  کا  خدشہ  لاحق  ہوتو  مسجد  نمرہ  میں  خطیب  کا  خطبہ  نہ  سننے  کی  وجہ  سے  کوئی  نقص  تو  لازم  نہیں  آتا؟

جواب:(۱)  مسنون  طریقہ  یہ  ہے  کہ  ۸؍  ذی  الحجہ  کو  فجر  کی  نماز  مکہ  مکرمہ  میں  ادا  کی  جائے،  پھر  منٰی  روانہ  ہوا  جائے  اور  وہاں  پانچ  نمازیں  ادا  کی  جائیں۔  ۸؍ذی  الحجہ  کی  ظہر،  عصر،  مغرب  اور  عشاء  اور  ۹  ؍  ذی  الحجہ  کی  نماز  فجر۔  اس  کے  بعد  منٰی  سے  عرفات  روانہ  ہوا  جائے۔  منٰی  میں  یہ  پانچویں  نمازیں  پڑھنا  اور  وہاں  رات  گزارنا  سنت  ہے۔  اگر  ایسا  نہ  کیا  جاسکے  مثلاً۷؍  اور  ۸؍  ذی  الحجہ  کی  درمیانی  شب  ہی  منٰی  پہنچ  کر  وہاں  ۹؍  کی  فجر  ادا  کی  جائے  تو  ایسا  کرنے  سے  کوئی  دم  تو  لازم  نہیں  آتا،  لیکن  سنت  پر  عمل  چھوٹ  جاتا  ہے۔

آج  کل  حاجیوں  کے  جم  غفیر  کی  وجہ  سے  سہولت  کی  خاطر  ایسا  کرلیاجاتا  ہے  ۔  یہ  جائز،  لیکن  خلاف  سنت  ہے۔  جو  حضرات  سنت  پر  عمل  کرسکتے  ہوں  انہیں  ویسا  ہی  کرناچاہئے۔

(۲)وقوف  عرفہ  یعنی  میدانِ  عرفات  میں  ٹھہرنا  حج  کاایک  فرض  ہے۔  میدان  میں  کسی  بھی  جگہ  حاجی  پہنچ  جائے  تو  یہ  فرض  ادا  ہوجائے  گا۔  حضرت  جابر  ؓ  سے  روایت  ہے  کہ  رسول  اللہ  ﷺنے  فرمایا:

عَرَفۃٌ  کُلُّہَا  مَوْقِفٌ۔  (صحیح  مسلم:  ۱۲۱۸)’’عرفہ  سارے  کا  سارا  وقوف  کی  جگہ  ہے‘‘۔

وقوف  عرفہ  کا  وقت  زوال  کے  بعد  سے  صبح  صادق  تک  ہے۔  ایک  حدیث  میں  ہے  کہ  اللہ  کے  رسول  ﷺ  نے  ارشاد  فرمایا:

الْحَجُّ  عَرَفَۃٌ  مَنْ  جَاءَ  لَیْلَۃَ  جَمْعِِ  قَبْلَ  طُلُوْعِ  الْفَجْرِ  فَقَدْ  اَدْرَکَ  الحَجَّ۔    (ترمذی:۸۸۹،  نسائی:  ۳۰۱۶،  ابن  ماجہ:  ۳۰۱۵)

’’حج  وقوفِ  عرفہ  سے  عبارت  ہے۔  جو  شخص  طلوع  فجر  سے  قبل  میدان  عرفات  میں  وقوف  کرلے  اس  کا  حج  ہوگیا‘‘۔

اس  بنا  پر  اگر  کوئی  شخص  کسی  وجہ  سے  مسجد  نمرہ  نہ  پہنچ  سکے  تو  اس  کے  حج  میں  کوئی  نقص  لازم  نہیں  آتا۔

کیا  حاجی  پر  دو  قربانیاں  واجب  ہیں؟

سوال:حج  تربیتی  کیمپ  میں  بتایاجاتا  ہے  کہ  حاجی  پر  دو  قربانیاں  واجب  ہیں۔  ایک  حج  کی  اورد  وسری  عیدالاضحی  کی۔  کیا  یہ  بات  صحیح  ہے؟  بہ  راہ  کرم  اس  کی  وضاحت  فرما  دیں۔

جواب:  حج  کی  تین  صورتیں  ہیں:  حج  کے  لیے  جانے  والا  صرف  حج  کرے،  عمرہ  نہ  کرے۔  اسے  حج  اِفراد  کہتے  ہیں۔  وہ  عمرہ  کرکے  احرام  کھول  دے،  پھر  زمانۂ  حج  آنے  پر  دوبارہ  احرام  باندھ  کر  حج  کرے۔  اسے  حجِ  تمتّع  کہتے  ہیں۔  وہ  عمرہ  کرنے  کے  بعد  بھی  حالتِ  احرام  میں  رہے،  یہاں  تک  کہ  حج  سے  فارغ  ہونے  کے  بعد  احرام  کھولے۔  اسے  حجِ  قِران  کہتے  ہیں۔  عموماً  ہندوستان  سے  جانے  والے  حاجی  حج  تمتّع  کرتے  ہیں۔  قربانی  حج  تمتع  اور  حج  قران  میں  واجب  اور  حج  افراد  کی  صورت  میں  مستحب  ہے۔

جو  حاجی  مکہ  مکرمہ  میں  پندرہ  دن  سے  کم  قیام  کرے  وہ  مسافر  ہے  اور  مسافر  پر  بالاتفاق  عیدالاضحی  کی  قربانی  واجب  نہیں  ہے۔  البتہ  جس  حاجی  کا  قیام  وہاں  پندرہ  دن  سے  زیادہ  ہو  وہ  مقیم  کے  حکم  میں  ہوجاتا  ہے۔  ایسے  شخص  پر  عیدالاضحی  والی  قربانی  کے  وجوب  کے  سلسلے  میں  فقہائے  احناف  سے  دونوں  طرح  کے  اقوال  منقول  ہیں۔  بعض  حضرات  کے  نزدیک  حاجی  پر  عیدالاضحی  والی  قربانی  مطلقاً  واجب  نہیں  اور  بعض  اقامت  کی  وجہ  سے  قربانی  واجب  قرار  دیتے  ہیں۔

حج  والی  قربانی  تو  حدود  حرم  میں  واجب  ہے،  البتہ  عیدالاضحی  والی  قربانی  حاجی  اپنے  وطن  میں  بھی  کرواسکتا  ہے۔

حدیث  ’الحجرالأسود  یمین  اللہ  کا  استناد؟

سوال:مطالعہ  کے  دوران  ایک  حدیث  پڑھی:  الحجرالاسود  یمین  اللہ  فی  الارض  (حجر  اسود  زمین  میں  اللہ  کا  داہنا  ہاتھ  ہے)  اس  حدیث  کی  سند  کیسی  ہے؟  اگر  صحیح  ہے  تو  اس  کا  مطلب  کیا  ہے؟

جواب:  یہ  روایت  حضرت  ابن  عباسؓ  پر  موقوف  ہے  (اس  کی  سند  رسول  اللہ  ﷺ  تک  نہیں  پہنچتی)  اس  کے  الفاظ  یہ  ہیں:

الحجرالأسود  یمین  اللہ  فی  الأرض  یصافح  بہ  عبادہ  ۔

’’حجر  اسود  زمین  میں  اللہ  کے  داہنے  ہاتھ  (کے  مثل  )  ہے،  جس  کے  ذریعے  وہ  اپنے  بندوں  سے  مصافحہ  کرتا  ہے‘‘۔

یہ  روایت  مصنف  عبدالرزاق،  فضائل  مکہ  للجندی،  اخبار  مکۃ  للأزرقی،  غریب  الحدیث  لابن  قتیبۃ،  کشف  الخفاء  للعجلونی  اور  دیگرکتب  حدیث  میں  مروی  ہے۔  یہ  حضرت  جابر  بن  عبداللہؓ  ،  حضرت  عبداللہ  بن  عمروؓ  اورحضرت  انس  بن  مالکؓ  سے  بھی  مروی  ہے  اور  اس  کی  بعض  سندیں  مرفوع  ہیں،  یعنی  ان  کے  مطابق  یہ  رسول  اللہ  ﷺ  کا  ارشاد  ہے۔  لیکن  اس  روایت  کی  تمام  سندیں  ضعیف  ہیں۔  علامہ  ابن  الجوزیؒ  نے  فرمایا  ہے:  یہ  حدیث  صحیح  نہیں  ہے۔  شیخ  ابن  العربیؒ  کاارشاد  ہے:  یہ  حدیث  باطل  ہے۔  علامہ  البانیؒ  نے  اس  کا  شمار  احادیث  ضعیفہ  میں  کیا  ہے۔  علامہ  ہیثمیؒ  نے  مجمع  الزوائد  میں  لکھا  ہے:  ’’اس  کے  ایک  راوی  عبداللہ  بن  المؤمل  پر  کلام  کیا  گیا  ہے‘‘۔

بعض  علماء  نے  کہا  ہے  کہ  یہ  روایت  اگرچہ  سند  کے  اعتبار  سے  ضعیف  ہے،  لیکن  اس  کا  معنیٰ  صحیح  ہے،  خطابیؒ  نے  لکھا  ہے:  اس  کا  مطلب  یہ  ہے  کہ  جو  شخص  زمین  پر  اس  سے  مصافحہ  کرے  گا  (یعنی  اسے  چھوئے  گا  اور  اس  کا  استلام  کرے  گا)  اس  نے  گویا  اللہ  تعالیٰ  سے  عہد  کیا۔  روایت  یہ  تھی  کہ  بادشاہ  کو  کسی  سے  کوئی  عہد  وپیمان  کرنا  ہوتا  تھا  تو  وہ  اس  سے  مصافحہ  کرتا  تھا۔  اس  کی  رعایت  سے  یہ  تعبیر  اختیار  کی  گئی‘‘۔

محب  طبریؒ  فرماتے  ہیں:  ’’جس  طرح  بادشاہ  کی  خدمت  میں  کوئی  شخص  پہنچتا  ہے  تو  اس  کے  ہاتھ  کا  بوسہ  لیتا  ہے،  اسی  طرح  حاجی  حرم  میں  پہنچتا  ہے  تو  اس  کے  لیے  سب  سے  پہلے  حجر  اسود  کا  بوسہ  لینا  مسنون  ہے۔  اسی  بنا  پر  حجر  اسود  کو  اللہ  تعالیٰ  کے  ہاتھ  سے  تشبیہ  دی  گئی‘‘۔

مولانا  امین  احسن  اصلاحیؒ  نے  لکھا  ہے:  ’’بعض  حدیثوں  میں  اسی  کو  ’یمین  اللہ‘  (خدا  کا  ہاتھ)  سے  تعبیر  کیاگیا  ہے۔  جو  اس  بات  کی  طرف  اشارہ  ہے  کہ  بندہ  جب  اس  کو  ہاتھ  لگاتا  ہے  تو  گویا  وہ  خدا  کے  ہاتھ  میں  اپنا  ہاتھ  دے  کر  اس  سے  تجدیدِ  بیعت  کرتا  ہے  اور  جب  اس  کو  بوسہ  دیتا  ہے  تو  گویا  یہ  اس  کی  طرف  سے  خدا  کے  ساتھ  عہدِ  محبت  ووفاداری  کا  اظہار  ہوتا  ہے‘‘۔  (تدبرقرآن:  ۱؍۳۸۴)

اکتوبر 2014

مزید

حالیہ شمارے

Zindagi e Nau