شخصیت سازی میں اساتذہ کا کردار

انعام الرحمن

انسانی وجود دو چیزوں کا مجموعہ ہے :ایک مادی دوسرا روحانی۔ جب تک دونوں اجزا کے فروغ اور ارتقا کی کو شش نہ کی جائے، انسان کی شخصیت ناقص اور نا مکمل رہتی ہے۔ ان دونوں اجزا کو سنوارنے اور بہتر بنانے کی جتنی کو شش کی جائے گی شخصیت اتنی ہی جاذب اور پر کشش بنتی جائے گی۔ جسمانی اور مادی ترقی اور نشو و نما کی ذمہ داری والدین کی ہوتی ہے جسے وہ بخوبی انجام دیتے ہیں ، لیکن روحانی اور فکری ارتقا کی ذمہ داری، جو کہ شخصیت کا اہم جز ہے، استاد کی ہے۔ استاد جن خوبیوں اور صلاحتوں کا حامل ہو گا اسی قدر اس کے طلبہ اور شاگردوں کی شخصیت میں نکھار پیدا ہوگا۔ سوال یہ پیدا ہوتا ہے کہ کیا شخصیت کے بنانے اور سنوارنے میں اساتذہ کی ضرورت ہے؟ کیا استاد کے بغیر تربیت نہیں ہو سکتی ؟اس کا بڑا آسان سا جواب یہ ہے کہ جس طرح  ایک باغ میں کچھ پودے اور پیڑ خود ر و ہوتے ہیں اور کچھ کوباقاعدہ لگایاجاتا ہے اور مالی ان کی نشوو نما پر خاص نظر بھی رکھتا ہے اور ان کی دیکھ بھال بھی کرتا ہے۔ اس کا نتیجہ یہ ہوتا ہے کہ خود رو پیڑ پودوں کی باغ میں کو ئی اہمیت اور وقعت نہیں ہوتی، لیکن جو پیڑ پودوں پر مالی کی خاص نظر ہوتی ہے ان کی بڑی اہمیت ہو تی ہے اور پھر وہی پیڑ پودے پھلتے پھولتے ہیں۔

اگر ہم قرآن پر نظر ڈالیں تو انبیا کا کام  بتایا گیا ہے کہ وہ لوگوں کی زندگیوں کا سنوارنے، انہیں حق و باطل کی تمیز سکھا نے ،ان کو مقصد زندگی سے روشناش کرانے اور انھیں کائنات کے خالق ومالک اور حاکم کی معرفت دلانے کے لیے تشریف لائے تھے۔خودنبی ﷺ نے اپنا تعارف  بحیثیت معلم کرایا  اور فرمایا  انما بعثت معلماـ(میں معلم بناکر بھیجا گیا ہوں) ۔ اگر ہم سیرت نبوی پر اس نقطہ نظر سے نظر ڈالیں تو یہ حقیقت آشکار ہوتی ہے کہ آپ ﷺ نے جس انداز میں اپنے اصحاب کی تربیت فرمائی انہیں ایک بڑے مقصد کے لیے تیار کیا وہ خالص معلمانہ انداز ہے۔

اس حقیقت سے انکارنہیںکیا جا سکتا کہ کسی بھی انسان کی کامیابی کے پیچھے اچھے استاد کی بہترین تربیت کار فرما ہوتی ہے۔ بلاشبہ وہ لوگ خوش نصیب ہوتے ہیں جن کی زندگی میں اچھے استاد میسر آجاتے ہیں۔ ایک معمولی سے نوخیز بچے سے لے کر ایک کام یاب شخص تک سارا سفر اساتذہ کا مرہون منت  ہوتاہے۔ ہم اگر امت مسلمہ کے ماضی میں دیکھیں تو ایسی سینکڑوں بلکہ ہزاروں روشن مثالیں ملیں گی جن میں اساتذہ نے محنت و مشقت اور خلوص و ہمدردی  کے ساتھ اپنے طلبہ کی تربیت کی، بعد میں انہی طلبہ نے بڑے علمی و فکری اور عملی کار ہائے نمایاں انجام دیے۔

موجودہ دور کے اساتذہ

اس مادہ پرستی کے دور میں، جب کہ انسان پیسہ کمانے کی مشین بنتا جا رہا ہے، اخلاقی قدریں پامال ہو رہی ہیں، استاد و شاگردکا رشتہ بھی متاثر ہوا ہے۔ طلبہ کے اندر اپنے اساتذہ کا وہ احترام نہیں ہے جو کچھ وقت پہلے تک نظر آتا تھا یا اور جس کے اساتذہ حق دا۰ر ہیں، دوسری جانب اساتذہ میں بھی خلوص اور جذ بہ کی کمی محسوس کی جانے لگی ہے ۔آخر ایسا کیوں ہوا ؟ یا کیوں ہو رہا ہے؟ اس کا آسان سا جواب یہی ہے کہ یہ اس وقت سے ہو رہا ہے جب سے تعلیم کو قابل فروخت شیٔ بنا دیا گیا ہے۔ اساتذہ طلبہ سے موٹی رقم وصول کرنا چاہتے ہیں، اسی وجہ سے طلبہ بھی ان کو اسی نظریہ سے دیکھتے ہیں۔استاد کلاس روم سے زیادہ کوچنگ اور ٹیوشن پڑھانے میں دلچسپی لیتے ہیں، بعض اساتذہ کی تو کوشش ہی یہی ہو تی ہے کہ کس طرح سے زیادہ سے زیادہ تعداد میں بچے ان کے پاس گھر پر یا کو چنگ میں آئیں، تاکہ وہ ان سے خوب پیسے بنا سکیں۔جب کہ ہم اپنے ماضی قریب میں ہی دیکھیں تو ایسی بے شمار مثالیں ہمیں مل جاتی ہیں کہ اساتذہ کی جانب سے طلبہ کے لیے اس بات کی عام اجازت ہوتی تھی کہ وہ کسی بھی وقت استاد کے گھر آکر اپنے مسائل کو حل کر سکتے ہیں۔وہ اس پر کسی قسم کا معاوضہ یااجرت وصول نہیں کرتے تھے۔ بلکہ ایسے اساتذہ کی بھی کمی نہیں تھی جو اپنی جیب خاص سے طلبہ کے تعلیمی اخراجات ادا کرتے تھے۔ اب صورت حال کافی تبدیل ہو چکی ہے۔ اب ایسی خبریں دیکھنے اور پڑھنے کو ملتی ہیں جن سے یہ اندازہ ہوتا ہے کہ استاد و شاگرد کا پاکیزہ رشتہ بہت متاثر ہو گیا ہے ۔ بعض مقامات سے ایسی بھی خیریں ملی ہیں کہ طلبہ نے استاذ سے دست درازی کی، بلکہ کچھ واقعات تو ایسے بھی سامنے آئے کہ استاد کو طلبہ کے ہاتھوں اپنی جان گنوانی پڑی ، دوسری جانب ایسی خبریں بھی خاصی تعداد میں آتی رہتی ہیں کہ کس طرح استاد نے اس پاکیزہ اور مقدس رشتے کی عظمت کو تار تار کر دیا۔یہ سب اس مادہ پرستانہ تہذیب کے کڑوے کسیلے پھل ہیں جو ا ب نظر آنے لگے ہیں۔

شاگردوں کی تعمیر سیرت

ـنبی پاک ﷺ کا ارشاد ہے: سنو !تم میں سے ہر شخص ذمہ دار ہے اور اس سے اس کی رعیت کے بارے میں پو چھا جائے گا۔(بخاری و مسلم)چنانچہ ایک حقیقی معلم اپنے شاگردوں سے شفقت و محبت اور نرمی سے پیش آتا ہے۔ وہ ان کوڈرانے و دھمکانے کے بجائے اپنی ذات سے مانوس کرتا ہے۔ جو سوال وہ کریں اس کا جواب شفقت سے دیتا ہے۔ کلاس روم میں وقت پر پہنچتا ہے اوروقت پورا ہونے پر ہی کلاس چھوڑتا ہے اور خواہش مند بچوں کو کلاس کے علاوہ بھی وقت دیتا ہے۔ان کی تعمیر سیرت کی بہت فکر کرتا ہے۔ ان کے دلوں میں ایمان، خوف خدا اور اتباع شریعت،آخرت کی جو اب دہی کا احساس اجاگر کرنے کی کو شش کرتا ہے۔ان کے ذہنوں سے تمام آلودگیوں کو دور کرنے اور دین کے بارے میں اغیار کے پھیلائے ہوئے شکوک و شبہات کا ازالہ کرنے میں ہمہ تن مصروف رہتا ہے، ان میں حمیت اور ایثار و قربانی کے جذبات بیدار کرتا ہے۔اپنے طلبہ کی سیرت سازی کی خاطر خود بھی  دین و شریعت کی پابندی کرتا ہے۔پھر ایک اچھا استاد اپنے طالب علموں کے دلوں میں مقصد اور نصب العین کی لگن پیدا کرتا ہے، ان کو بیکار مشاغل سے اجتناب کرنے اور اسلام کو سر بلند کرنے کی لگن سے سر شار کرتا ہے۔وہ ان کو دنیا سے بے نیازی اور مادیت پرستی سے اجتناب کی تلقین کرتا ہے، کیونکہ جو علم صرف تلاشِ معاش اور تن آسانی کا ذریعہ بن جائے،وہ آستین کا سانپ ہے او رجو علم دل و نگاہ کو پاک صاف کرے وہی اصلی علم ہے۔ایک اچھے معلم کے لئے یہ بھی ضروری ہے کہ اپنے شاگردوں کو محنت کا عادی بنائے۔قانون قدرت کے تحت جھولی اسی کسان کی بھرتی ہے جو اپنا خو ن پسینہ ایک کردے۔آج کاہلی،سستی،ضیاع وقت اور کام کو ٹالنے کی عادت ہماری امتیازی خصوصیت بن چکی ہے۔نتیجہ کے طور پرتعلیم و تعلم کا معیاربہت گر چکا ہے، چنانچہ شاگردوں کے دلوں میں محنت کی عظمت راسخ کرنا اور انھیں جانفشانی سے کام کرنے کاعادی بنانااستاد کے لیے بہت ضروری ہے۔

ایک اچھے معلم کا فرض یہ بھی ہے کہ وہ طلبہ کو صوبائی ولسانی تعّصبات سے نکال کر ان کے ذہنوں کو اسلامی اخوت سے آشنا کرے۔ اچھا استاد وہ ہے جو خود تخلیقی صلاحیت رکھتا ہو اور آگے یہی صلاحیت وہ اپنے شگردوں کو بھی منتقل کرے۔ایک تخلیقی ذہن رکھنے والا استاد مسلسل محنت سے اپنے کام میں لگا رہتا ہے وہ اپنے شاگردوں میں بھی یہ عادت راسخ کر دیتا ہے۔

موجودہ دور میں معلم کو طلبہ کے سامنے خود کو منوانے کے لیے بہت کچھ کرنا پڑے گا۔ اگر معاشرے کو درست کرنا ہے تو ہمیں بنیاد پریعنی استاد کے رول پر توجہ دینی ہو گی۔ ہمارے اساتذہ کو ٹیم پلیئر اور ٹیم لیڈر کا رول ادا کرنے کے لئے تیار ہونا ہو گا۔ استاد کو اس بات کو سمجھنا ہو گا کہ روحانی والدین کا لفظ کتابوں میں تو اچھا لگتا ہے مگر وقت کے تقاضوں کو سمجھتے ہوئے اب استاد کو اپنا بنیادی کردار نبھانا ہو گا۔ اگر استاد آج خود کو رول ماڈل کے کردار میں ڈھال لیں تو طلبہ خود بہ خود فالوور کے رول میں ڈھل جائیں گے۔ کوئی قوم تب طاقت ور ہوتی ہے جب وہ وقت ضرورت منتشر ہجوم نہیں بلکہ مربوط قوت کے طور پر سامنے آئے۔ ایک قوم نا قابل شکست قوت تب بنتی ہے جب اسے اپنے کردار کا ادراک ہو۔ہرمیدان میںکام یابی کی ضمانت کے لیے ہمارے تعلیمی اداروں اور اساتذہ کو اپنے کردار کا تعین کرنا ہو گا۔

مسلمان معلمین کی ذمہ داریاں

مسلمان معلم پر دوہری ذمہ داریاںعائد ہوتی ہیں: ایک تو وہ جو محض معلم ہونے کے ناطے ان کے لیے ضروری ہے۔دوم وہ جو مسلما ن معلم ہونے کی بنا پر ہیں۔ بنیا دی طور پر ہر معلم معمارِقوم ہوتا ہے۔وہی ہر وقت نسلِ نو کی تربیت کرتا رہتا ہے اور ان کو مختلف علم وفنون پڑھا تاہے،ذاتی نمونہ و کردار سے ان کی تربیت کرتا رہتا ہے۔حتیٰ کہ تمدن کے تمام شعبوں کوسنبھالنے والے مردان ِ کار استا د ہی کی تعلیم و تربیت کا نتیجہ ہوتے ہیں۔چاہے وہ مملکت کی باگ ڈور سنبھالنے والے ہوں یا عدلیہ کو چلانے والے،وہ وکیل ہوں یا انجینئر، ڈاکٹرہوں یا پروفیسر،وہ فوج میں ہوںیا پولیس میں۔بہر حال ہر کوئی زندگی کے جس شعبہ میں کام کررہا ہے وہ اپنے استاد کی تربیت کا عکس ہوتا ہے۔ انسان سازی میں اگرچہ نصابِ تعلیم اور تعلیمی اداروں کا بھی گہرا اثر ہوتا ہے مگر حقیقت یہ ہے کہ سب سے بڑھ کر اس کا اہم ستون استاد ہی ہوتا ہے۔ وہ پورے نظام ِتعلیم کا مرکزو محور ہے۔نصاب تعلیم اسی کوپڑھانا ہے۔اگر استاد اپنی اہمیت و ذمہ داری محسوس کرلے، اس کو اپنے مقام سے آگہی ہو اور اگر اس کو احساس ہو کہ وہ اول و آخر مسلمان ہے اور اس کواسلامی انقلاب کے لیے نسل نو کو تیار کرنا ہے،تو ہر قسم کے حالات میں بھی وہ آنے والی نسل نو کی بے پناہ قوتوں کو اسلام کے لئے مسخر کر سکتا ہے۔

جو استاد صرف وقت گزارنے کیلئے کلاس میںاونگھتا رہے اور رسماً لیکچر دے کر چلا جائے،یا پھر اپنی انرجی کو ٹیوشن پڑھانے کے لیے بچا کر رکھے اور  پیسے کمانے کی مشین بن جائے، وہ صحیح معنوں میں استاد کہلانے کا حق دارنہیں۔ بنیادی طور پر استاد اور تعلیم کا شعبہ ایثار کیش پیشہ ہے، اس کے ساتھ ایک تقدس منسلک ہے۔ اس لئے اس شعبے میں صرف ان لوگوں کو آنا چاہئے جن میں بے لوث خدمت کا جذبہ اور ایثار و قربانی کی صلاحیت موجود ہو۔ جس استادنے اپنے شاگرد پر انمٹ نقوش چھوڑے،نئی منزلوں کی طرف آگے بڑھنے سے قبل اس کی خوابیدہ تخلیقی صلاحیتوں کو ابھارا، اس میں پڑھنے کا شوق اور لکھنے کا جذبہ پیدا کیا اوراسے نئی منزلوں سے آشناکردیا۔اپنی پاکیزہ فکر،صالح کردار اور گہرے مطالعے سے شاگردوں کے ذہن پر خوش گوارنقوش مرتب کیے، اس کی ذہنی و فکری تشکیل میں کردار سرانجام دیا او ر اسے معرکے سرکرنے کے قابل بنایااصلاً وہی استاد کہلانے کا حق دار ہے۔

قابل،لائق اورذہین وفطین شاگردوںکی سوچ و فکراورشخصیت پراپنے استادکی گہری چھاپ ہوتی ہے۔ وہ غور وفکر کے چراغ جلاکر اپنی شخصیت کا ایکسرے کریں اور اپنے باطن میں گھس جائیں تو ان کی شخصیت کے سنوارنے میں کئی ایسے استادوں کے چھپے ہوئے ہاتھ ملیں گے۔ اچھے طالب علموںکی بہت سی عادات زندگی کے رویے، بول چال اور روز مرہ کی زبان کے الفاظ و محاورے ان اساتذہ سے ملتے ہیں جنہوں نے انھیں پڑھایا،ان پر توجہ دی اور ان کی کردار سازی کی۔اسی لیے کہاجاتاہے کہ استاد معمارقوم ہوتاہے اور قوموں کی تعمیر میں اس کا بڑا اہم کردار ہوتا ہے۔

اکتوبر 2017

مزید

حالیہ شمارے

جولائی 2024

شمارہ پڑھیں
Zindagi e Nau