خدمت خلق اور دعوت اسلامی

محمد اسلم غازی

اسلام میں بندگیِ رب کے ساتھ ساتھ خدمت خلق کی بھی بڑی اہمیت ہے۔ خدمت خلق کا ہی دوسرا نام حقوق العباد ہے۔ قرآن و حدیث سے معلوم ہوتا ہے کہ حقوق اللہ کے ساتھ حقوق العباد کی ادائی مؤمنانہ وصف ہے۔

اِلَّا المُصَلِّیْنَo الَّذِیْنَ ہُمْ عَلٰی صَلَاتِہِمْ دَآئِمُوْنَ o وَالَّذِیْنَ فِےْ ٓ اَمْوَالِہِمْ حَقٌّ مُّعْلُومٌ o لِّلسَّآئِلِ وَالْمَحْرُوْمِ o ﴿المعارج ۔ ۲۲-۲۵﴾

’’مگر وہ نمازی ﴿اس عیب سے بچے ہوئے ہیں﴾ جو پابندی سے نمازیں پڑھتے ہیں اور جن کے مالوں میں سائل اور محروم کا حق مقرر ہے۔ ‘‘

حقوق اللہ کے ساتھ حقوق العباد یا خدمت خلق کے انکار کو قرآن کافرانہ عمل کے مشابہ قرار دیتا ہے:

اَرَئَ یْتَ الَّذِی یُکَذِّبُ بِاالدِّیْن o فَذٰلِکَ الَّذِیْ یَدُعُّ الْیَتِیْمَ o وَلَاَ یَحُضُّ عَلٰی طَعَامِ المِسْکِین o ﴿الماعون۔۱-۳﴾

’’کیا تم نے دیکھا آخرت کو جھٹلانے والے کو؟ یہ وہی ہے جو یتیم کو دھکے دیتا ہے اور مسکین کا کھانے دینے پر نہیں اکساتا۔‘‘

دکھاوے کی نماز پڑھنے والوں اور خسیس طبیعت لوگوں کو جو دوسروں کی معمولی سی خدمت بھی نہیں کرتے، قرآن تباہی کی دھمکی دیتا ہے:

فَوَیْلٌ لِّلْمُصَلِّیْنَ o الَّذِیْنَ ہُمْ عَن صَلَاتِہِمْ سَاہُوْنَ o الَّذِیْنَ ہُمْ یُرَآؤنَ o وَیَمْنَعُوْنَ الْمَاعُوْنَ o  ﴿الماعون:۴-۷﴾

’’تو تباہی ہے ان نمازیوں کے لیے جو نماز سے غافل ہیں اور دکھاوا کرتے ہیں اور لوگوں کی ضرورت کی معمولی چیزیں بھی روکتے ہیں۔‘‘

آنحضورﷺ نے تو حقوق العباد میں خیانت کرنے والوں کے ایمان کی نفی فرمائی ہے۔ آپﷺ نے فرمایا کہ ’‘خدا کی قسم وہ مومن نہیں ہے ﴿یہ تین بار فرمایا﴾ جو خود تو پیٹ بھر کر کھائے لیکن اس کا پڑوسی بھوکا سوجائے۔ اس نوعیت کی اور بھی کئی حدیثیں ہیں۔

درج بالا تمام آیات مکی ہیں۔ مکے میں مسلمانوں کو خدمت خلق کرنے کی بڑی تاکید کی گئی تھی۔ مکے میں عبادات اور حلال و حرام کی فہرست نازل فرمانے سے پہلے اللہ تعالیٰ نے مسلمانوں کو حقوق العباد، خدمت خلق اور اعلیٰ اخلاقی اقدار کی اہمیت سے واقف کرایا اور انھیں داعی کے کردار کا لازمی وصف قرار دیا۔ اس بات کو اُن دو پڑوسیوں کی مثال سے بہ آسانی سمجھا جاسکتا ہے جو ہمیشہ آپس میں لڑتے جھگڑتے رہتے ہیں۔ ان میں سے اگر کوئی ایک بیمار پڑ جائے تو وہ دوسرے کی پیش کردہ دوا بدگمانی اور شکوک کی بنائ پر ہرگز استعمال نہیں کرے گا۔ البتہ اُن دونوں کے باہمی تعلقات خوشگوار ہوں تو دونوں آنکھ بند کرکے ایک دوسرے پر اعتماد کریں گے۔ پس داعی کے اخلاق و کردار، صداقت و دیانت اور انسانیت نوازی سے مدعو اگر واقف اور متاثر ہو تو پھر جلد ہی وہ اس کی دعوت سے بھی متاثر ہوکر رہے گا۔

قرآن نے سابق انبیاء کرامؑ کی دعوتی جدوجہد کا جو نقشہ مسلمانوں کے سامنے بطور اُسوہ پیش کیا ہے، اس میں انتھک اور مسلسل دعوت، مشکلات اور ابتلائوں میں پہاڑ کی سی ثابت قدمی کے ساتھ ساتھ خدمت خلق، انسانوں کو مختلف تکالیف اور پریشانیوں سے نجات دلانے اور سماجی مسائل کو حل کرنے کے اقدامات کا تذکرہ بہت زیادہ نمایاں ہے۔ مثلاً:

۱-  حضرت ہودؑ قوم عاد کی طرف مبعوث کیے گئے تھے، جس میں شرک و بت پرستی کے علاوہ اونچی اونچی عمارتیں بنا کر اسراف اور فضول خرچی کے ذریعے اپنی شان و شوکت جتانے کی بڑی اخلاقی برائی تھی۔ حضرت ھودؑ نے ان دونوں بیماریوں کا علاج کرنے کی کوششیں بیک وقت کیں جن کا تذکرہ قرآن پاک کی سورہ الشعراء کی آیات ۳۲ ۱ تا ۱۴۰میں تفصیل سے دیکھا جاسکتا ہے۔

۲-  حضرت صالحؑ کو قوم ثمود کی طرف بھیجا گیا تھا جو پہاڑوں کی چٹانیں تراش کر ان میں بڑے بڑے محلات بناتی اور اونچی اونچی عمارتیں تعمیر کرتی تھی۔ حضرت صالحؑ نے اُس کے شرک و کفر کے علاوہ اُس فضول اور بے فیض کام پر بھی گرفت کی تھی۔ ملاحظہ ہو سورۂ الاعراف، آیات ۷۳ تا۷۹ ، سورۂ الشعراء آیات ۱۴۱ تا ۱۵۹۔

۳-  حضرت لوطؑ نے اپنی قوم کو ہم جنسی کی بدترین اخلاقی پستی سے نکالنے کی بھرپور کوششیں کی تھیں۔ قرآن میں جہاں جہاں آپؑ کی دعوتی کوششوں کا تذکرہ ہے وہاں وہاں سماج کو اُس قبیح عادت سے چھٹکارا دلانے کی جدوجہد کا ذکر بھی لازماً کیا گیا ہے۔ ملاحظہ کیجیے سورۂ الاعراف آیات :۷۹ تا ۸۴،سورہ ھود آیات :۷۷ تا ۸۳۸، سورہ الحِجر آیات:۵۸ تا۷۷، سورہ الانبیاء آیات:۷۳ تا۷۵،سورہ الشعراءآیات:۱۶۰ تا۱۷۵ ، سورہ النمل آیات:۵۴ تا۵۸ ،سورہ العنکبوت آیات:۲۸تا ۳۵۔

۴-  حضرت شعیبؑ کی قوم میں ناپ تول میں بے ایمانی اور سنسان راستوں پر لوٹ مار کرنے کی بیماریاں تھیں﴿بعض مفسرین کا خیال ہے کہ حضرت شعیبؑ دو قوموں کی طرف بھیجے گئے تھے۔ اہل مدین اور اصحاب الایکہ۔﴿ تفہیم القرآن جلد ۵، تفسیر سورہ الشعرائ آیت :۶۷۱﴾ آپؑ نے اپنی دعوتی جدوجہد کے ساتھ ساتھ اُن سماجی بیماریوں کی اصلاح کی بھی کوششیں فرمائی تھیں، جن کا تذکرہ قرآن میں کیا گیا ہے۔ ملاحظہ ہو: سورہ الاعراف آیات:۸۵تا۸۷ ، سورہ ھود آیات:۸۴تا ۹۵، سودہ الشعراء آیات:۱۷۶تا ۱۹۱ ، سورہ العنکبوت آیات :۳۶، ۳۷۔

۵- حضرت موسیؑ اور ہارونؑ کو مصر کے قبطیوں اور ان کے بادشاہ فرعون کے کفر و شرک اور ظلم و استحصال کے خاتمے کے لیے بھیجا گیا تھا۔ ساتھ ہی بنی اسرائیل کو فرعون کی غلامی سے آزاد کراکے ان کی اصلاح کا کام بھی انھیں انجام دینا تھا۔ حضرات موسیؑ و ہارونؑ کی جدوجہد قرآن میں بہت تفصیل سے بیان ہوئی ہے۔

۶-  حضرت یوسفؑ نے خدمت خلق کا بڑا جامع منصوبہ بنایا۔ آپؑ کی تدبیر سے مصر و عراق اور آس پاس کے ملکوں کی ایک بہت بڑی آبادی سات سالہ قحط کی ہلاکت سے محفوظ رہی تھی۔ قحط سے قبل آپ نے سات سالوں تک غلے کی بچت کرکے اس کا بڑا ذخیرہ محفوظ کرلیا تھا۔

۷- حضرت دائود ؑ اور حضرت سلیمانؑ نبی ہونے کے ساتھ ساتھ بادشاہ بھی تھے، جن کے ذمے اپنی رعایا اور اطراف میں رہنے والے انسانوں کے لیے ایک رفاہی سلطنت کا قیام بھی تھا۔

قرآن کریم کی اِن تعلیمات اور آنحضو(ص)ر کی اخلاقی تربیت سے صحابہ کرام(رض) پر زبردست اثرات مرتب ہوئے۔ آپﷺ کی رہنمائی میں انہوںؓ نے دعوت دین، خدمت خلق اور حقوق اللہ کی ادائی کا زبردست کام انجام دیا اور اپنے سماج کے مسائل کو حل کیا۔ غلام آزاد کرائے۔ لڑکیوں کو زندہ دفن ہونے سے بچایا۔ یتیموں ، کمزوروں، غلاموں ، خواتین ، مسافروں وغیرہ کے حقوق کا تحفظ کیا۔ عورتوں کا وقار بحال کرایا۔ شراب، جوا، فحاشی، عریانی، زناکاری، فریب دہی، چوری، لوٹ مار، قتل و غارتگری وغیرہ جرائم کا کُلّی استیصال کیاگیا۔ غریبوں ، بے سہاروں، یتیموں، بیوائوں، مطلقاؤں، مریضوں، مسافروں، غلاموں وغیرہ کے لیے مالی امداد کا زبردست ادارہ بیت المال اور دیگر رفاہی ادارے قائم کیے گئے۔

اسی انبیائی نمونے کااتباع موجودہ تحریکات اسلامی کررہی ہیں۔ مصر اور دیگر عرب و افریقی ممالک میں اخوان المسلمون ، فلسطین میں حماس، لبنان میں حزب اللہ، ترکی میں مختلف پارٹیاں، پاکستان اور بنگلہ دیش میں جماعت اسلامی، الجزائر میں الجمیعت الاسلامیہ وغیرہ نے دعوت دین کے ساتھ خدمت خلق کو اساس بنایاہے۔تحریکات اسلامی اپنے ممالک میں متبادل حکمراں طاقت کے طور پر سامنے آئی ہیں۔جماعت اسلامی ہند ابتدائ ہی سے اپنی پالیسی پروگرام میں خدمتِ خلق کو نمایاں اہمیت دیتی رہی ہے اور سنجیدگی سے اس پرعمل پیرا ہے۔ مزید بہتری اور تیزی لانے کے لیے وہ اپنے متوسلین کی مسلسل تربیت بھی کررہی ہے۔

دعوت دین کا کام کرنے والی تمام تنظیموں اور افراد کو یہ بات گرہ میں باندھ لینی چاہیے کہ مسائل کے شکار عوام کو محض وعظ ونصیحت کرنا مفید ثابت نہ ہوگا۔ ضرورت ہے کہ انبیائ کرامؑ کے طریقے پر عمل کرتے ہوئے ہم عوام کے مسائل کو بھی حل کرنے کی مخلصانہ کوششیں کریں۔ انھیں پریشانیوں اور مصیبتوں سے نجات دلانے کی جدوجہد کریں۔ ہمارا عمل گواہ ہوکہ ہم انسانیت کے حقیقی خیرخواہ ہیں۔ ایسی صورت میں ان شاء اللہ حالات بڑی تیزی سے اسلام کی دعوت کے حق میں تبدیل ہوجائیں گے۔

جولائی 2011

مزید

حالیہ شمارے

Zindagi e Nau